Author Topic: حُسن کی روحُ. سیما سردارزئی کے نام . غنی پھوال  (Read 1976 times)

0 Members and 1 Guest are viewing this topic.

Offline Zahida Raees Raji

  • Administrator
  • *****
  • Posts: 7062
  • Karma: 356
    • Baask-Home of Baluchi Language, Literature & Culture

. حُسن کی روحُ
سیما سردارزئی کے نام
     غنی پھوال 
بینائ وہ نہیں
جو دکھا سکے
جبر کی جبلت میں
قید کسی حیوان کی طرح

حُسن منظر میں کہاں؟
دلفریب نظارے
رنگینیاں پھولوں کی
دل آویز حُسن
سب سورج دیوتاکی دَیا سے ہے
وردان ہے بس ان کرنوں کی
ورنہ کورے کاغذ کی
 طرح سے سب کچھ بے معنی
ھمنواؤں!
ہو سکے تو کبھی
کسی منظر کی جا کر
روح کی گہرائ میں اُترو
جہاں تم مظہر کی
احساس کی خوشبو کو
سُونگھ سکو، چُھو سکو
اور دیکھ سکو کہ کیسے
حُسن کی روح
کسی جبرئیل کی طرح
لازوال وسعتوں کی
بےکراں بائیں پھیلا کر
اپنی ابدی چاہتوں کی
آغوش میں
سمیٹ لے گی تم کو
تب قدرت کھیلے گی ھولی
رنگ و نُور کی حقیقی چشمے
پُھوٹ کرپھیلیں گے ہرسُو
اور تُمھارے اندر کے
کورے کینوس پر
حُسن کی دیوی کی روحُ
ایک شاہکار رُوپ دھار لے گی
جو ھر دل کی گیلری میں
آویزاں ھوگی ھمیشہ کیلئے
 
Zahida Raees :Raji:
baaskadmin@gmail.com , admin@baask.com
Learn Baluchi Composing in INPAGE
Learn Balochi Poetry Background Designing
Help Line

Offline Safar Ahsaan Baloch

  • Baask Poet
  • ***
  • Posts: 13
  • Karma: 2
باز وش واجہ پہوال،، بانُک سیما سردارزہی مئے راج ءِ مزنیں ہستی ئے او بانُک ءِ جوڈ کُرتگیں عکس وتی اندر ءَ باز کّسہ  داراں ،، مردُم ءَ جیڈگ پرمایاں ،، اﷲ بانُکیں گُہار ءَ سلامت بکنت ،،،، آمین